پختانہ د تاریخ پر رنڑہ کے از بہادر شاہ ظفر کاکاخیل 329

پختانہ د تاریخ پر رنڑہ کے از بہادر شاہ ظفر کاکاخیل

پختانہ د تاریخ پر رنڑہ کے از بہادر شاہ ظفر کاکاخیل ۔550 قبل مسیح سے لیکر 1964ء تک پشتونو کی تاریخ پر مستند کتاب

تاریخ وسیع تر معنوں میں انسانی زندگی کے مختلف پہلوؤںاور انسانی کارناموں کی ایک طویل داستان ہے۔ اس کا آغاز اس وقت سے ہوا جب انسان حیوانات کی دنیا سے نکلا اور انسانیت کے دائرے میں داخل ہوا۔ انسانی زندگی اور کارناموں کی یہ طویل داستان جہاں ایک طرف پر لطف ہے وہیں دوسری طرف فائدہ مند بھی ہے۔ اس میں انقلابات اور قوموں کے عروج و زوال کے عجیب و غریب واقعات بیان کیے گئے ہیں۔ اور اسے پڑھنے سے قوموں کی اپنے ملکوں اور اپنے قائدین کے شاندار کاموں سے محبت بڑھ جاتی ہے۔ تاریخ ان لوگوں کی کامیابیوں اور ناکامیوں کی آئینہ دار ہے جنہوں نے اقتدار اور اختیار کے حصول کے لیے مختلف ادوار میں جدوجہد کی۔
قوموں کا عروج و زوال قومی تاریخ کا ایک بڑا حصہ ہوتا ہے۔ اپنی قومی روایات اور اسلاف کے کارناموں سے آگاہی، اپنے قائدین کی جرأت، بہادری، دور اندیشی اور جدوجہد سے آشنا ہونا قوموں کا ضروری اور خوشگوار فریضہ سمجھا جا تا ہے۔ کیونکہ دنیا کی ہر قوم اپنے قائدین کے شاندار کارناموں سے سیکھتی ہے اور آگے بڑھنے کی خواہش کرتی ہے۔
دنیا کی مشہور ترین اقوام کی طرح پشتون ایک قدیم قوم ہے جس کی ایک طویل تاریخ ہے۔ بدقسمتی سے اس قوم کی قدیم تاریخ اندھیروں میں چھپی ہوئی ہے ، جسکی وجہ واضح ہے۔ قبائلی طرز زندگی انسانی سماجی زندگی کا ایک موثر حصہ ہے۔ پشتون معاشرے کی بنیاد قبائلی نظام پر ہے۔ ان کے علاقے کے قدرتی ماحول اور جغرافیائی محل وقوع نے ان میں کچھ خاص خصوصیات پیدا کی ہیں۔
قبائلی نظام کی وجہ سے ہر قبیلے کے لوگوں کی وفاداری اور محبت اپنے قبیلے کے سربراہ سے وابستہ ہوتا ہے۔ یہاں تک کہ وہ اپنے اوپر کسی دوسرے قبیلے کی حکمرانی بھی قبول نہیں کرتے۔ یہ بھی ایک تاریخی حقیقت ہے کہ تاریخ کے مختلف ادوار میں پشتونوں نے ہندوستان کی طرف آنے والی غاصب قوموں کا سب سے پہلے مقابلہ بھی کیا ہے۔ اپنے علاقے کے جغرافیائی محل وقوع کی وجہ سے وہ ہمیشہ اپنی آزادی کے لیے کھڑے رہے ہیں۔ اور حقیقی معنوں میں کسی کے ظلم کو قبول نہیں کیا۔ مزید یہ کہ وہ دوسری قوموں کی طرف متوجہ نہیں ہوئے اور نہ ہی دوسری قومیں ان کے قریب آئی ہیں۔ اب اگر یہ درست ہے کہ انسان ماحول کا غلام ہے تو یہ کہنا بے جا نہ ہوگا کہ پشتونوں کی تاریخ قدرتی ماحول، جغرافیائی محل وقوع اور ان کے قبیلے کے طرز زندگی کی پیداوار ہے، دوسرے الفاظ میں، انہوں نے زندگی کے دیگر معاملات پر اپنی آزادی کی حفاظت کو ترجیح دی۔ اور یہی وجہ ہے کہ ہمیں ان کے قدیم کارناموں کا ریکارڈ تحریری طور پر نہیں ملتا۔ یہ کہنا بے جا نہ ہوگا کہ ہیروڈوٹس (550) قبل مسیح کے بعد اور بابر (1504ء) سے پہلے پشتونوں کی دو ہزار سال سے زائد کی تاریخ اپنے حقیقی معنی میں پوشیدہ ہے۔اور اس طویل عرصے کے بارے میں کوئی ایسی تاریخی معلومات نہیں ملتی جس سے پشتون تاریخ کے مختلف پہلوؤں کا پتہ چلتا ہو۔
سولہویں صدی کے وسط سے لے کر جب مغلوں نے ہندوستان میں پشتونوں سے سیاسی اقتدار حاصل کی تو مغل دربار کے حکم پر کچھ درباری تاریخدانوں نے پشتونوں کے بارے میں تاریخیں لکھیں۔ چونکہ یہ تاریخیں ایک خاص تعصب کے نقطہ نظر کے زیر اثر لکھی گئی ہیں، اس لیے اس میں تصویر کا کوئی بھی رخ اپنی اصلی شکل میں نظر نہیں آتا۔
انیسویں صدی کے آغاز میں بعض مستشرقین نے مشرقی اقوام اور ان کی زبانوں کی طرف توجہ کی۔ اسی سلسلے میں بعض اہل علم نے پشتونوں کی تاریخیں لکھنا شروع کیں اور پشتو زبان پر تحقیق و تحقیق شروع کی۔ ان سکالرز کا تحقیقی اور علمی کام انتہائی قابل تحسین ہے۔ درحقیقت یہ ان مستشرقین کی تحقیق کی بدولت ہے کہ پشتونوں کی تاریخ پر تحقیق اور تجسس کی روشنی میں ایک نئی راہ نکل آئی ۔
میرے خیال میں پشتون قوم کی تاریخ لکھنے میں کچھ خاص قسم کی مشکلات درپیش ہوتی ہیں۔ ایک مسئلہ یہ ہے کہ اس قوم کی قدیم تاریخ محض قیاس اور جزوی معلومات پر مبنی ہے۔ دوسرا مسئلہ پشتونوں کی اصل نسل ہے۔ اگرچہ پشتونوں کی نسلی تحقیق کا مسئلہ ایک خالص علمی اور تاریخی موضوع ہے۔ بدقسمتی سے، اس قوم کے بارے میں جو کچھ لکھا گیا ہے اُس سے معاملا اور بھی پیچیدہ ہو گیا ہے۔ پشتونوں کی تاریخ کا تیسرا مسئلہ میرے خیال میں یہ ہے کہ چاہے اپنے ہو یا غیر سب نے ان کے لئے افغان اور پٹھان کے الفاظ استعمال کیے ہیں، بالفاط دیگر ، بیرونی دنیا میں یہ لوگ افغانوں اور پٹھانوں کے طور پر جانے جاتے ہیں۔ تاہم پشتون اپنے آپ کو نہ افغان کہتے ہیں اور نہ پٹھان بلکہ پختون کہتے ہیں۔ یہ کچھ مشکلات ہیں جو ایک مصنف کو پشتونوں کی تاریخ لکھنے میں ہو سکتی ہیں۔
جہاں تک پشتو زبان میں پشتو تاریخ کی کتابوں کا تعلق ہے، میرے علم میں اب تک بہت سی کتابیں لکھی جاچکی ہیں جن میں سے دو کتابیں قابل ذکر ہیں، ایک انگریزی مصنف مسٹر ملسن کی “تاریخ افغانستان” کا پشتو ترجمہ ہے جسے جناب خان بہادر منشی احمد جان نے انگریزی زبان سے پشتو میں ترجمہ کیا ہے۔ دوسری تاریخ قاضی عطا اللہ خان مرحوم کی د پښتنو تاريخ”ہے۔ لیکن یہ دونوں تاریخیں بالکل ادھوری کیوں ہیں۔ اگرچہ قاضی عطاء اللہ خان صیب کی تاریخ تین جلدوں پر مشتمل ہے ، لیکن اس میں پشتون تاریخ کا ایک بہت ہی مختصر عرصہ شامل ہے۔ منشی احمد جان کی تاریخ اس سے قدرے بہتر اور زیادہ مکمل ہے۔
یہ ایک تاریخی حقیقت ہے کہ پشتون کم و بیش 300 سال سے ہندوستان میں برسراقتدار رہے ہیں لیکن مندرجہ بالا تاریخیں ہندوستان میں پشتونوں کے سیاسی عروج و زوال کے ذکر سے خالی ہیں۔ ان تاریخوں میں ایک اور بڑی کمی یہ ہے کہ یہ پشتونوں کے قدیم تاریخی دور کے ذکر سے بالکل خالی ہیں جو تقریباً ڈیڑھ ہزار سال پرانا ہے۔ اور اس لحاظ سے جناب سید بہادر شاہ ظفر کاکا خیل کی یہ تاریخ یقیناً مکمل اور جامع ہے۔ اس کتاب میں 550 قبل مسیح سے لیکر 1964ء تک پشتونوں قبائل کی تاریخ مستند حوالا جات کے ساتھ بیان کی گئی ہے۔
کتاب “پختانہ د تاریخ پہ رنڑہ کے” کی اہمت و افادیت کے پیش نظر اسے پاکستان ورچوئل لائبریری کے قارئین کے مطالعہ کے لئے آنلائن پیش کی جارہی ہے۔ کتاب آنلائن پڑھنے اور مفت ڈاؤنلوڈ کرنے کے لئے دستیاب ہے۔ ڈاؤنلوڈ کرنے کے لئے نیچے موجود لنک سے استفادہ کریں۔ شکریہ

یہاں سے ڈاؤنلوڈ کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں