محبت مستقل غم ہے از ساغر صدیقی 161

محبت مستقل غم ہے از ساغر صدیقی

کتاب “محبت مستقل غم ہے” تحریر ساغر صدیقی

محبت مستقل غم ہے ساغر صدیقی کی شاعری کا مجموعہ ہے جسے جناب وصی شاہ نے مرتب کیا ہے. یہ کتاب ساغر کے غزلوں اور دوسری سماجی و معاشرتی شاعری اور نظموں‌پر مشتمل ہے. ساغر کی شاعری میں آپ کو وہ سب کچھ ملتا ہے جسے آپ خود بھی بڑی شدت سے اپنے ارد گرد محسوس کررہے ہوتے ہیں. ساغر کی شاعری ہم سب کو اپنے دل کے بہت قریب اس لئے محسوس ہوتی ہے کہ ساغر کی شاعری دکھوں سے عبارت ہے اور زندگی چونکہ سر پر دکھوں کا تاج سجائے ہمارے اردگرد رقص کرتی رہتی ہے سو ہمیں ساغر کی شاعری جیسی ہی معلوم ہوتی ہے. ساغر کی شاعری یا زندگی، زندگی یا ساغر کی شاعری دونوں ایک سی ہیں. محبت کی طرح……. مستقل غم.
ساغر صدیقی پاکستان کے بلند پایہ اردو شاعر تھے، جس کو ولی شاعر کے طور پر بھی جانا جاتا ہے۔ اُن کا اصلی نام محمد اختر تھا۔ ساغر 1928 میں متحدہ ہندوستان کے شہر امبالہ میں ایک متوسط گھرانے میں پیدا ہوئے – ، ایک پاکستانی اردو شاعر تھے۔19 جولائی 1974 کو یہ بے گھر شاعر 46 سال کی عمر میں لاہور کی ایک گلی کے کونے میں مردہ پائے گئے۔
ساغر صدیقی کی ذاتی زندگی کے بارے میں چند ہی تاریخی ریکارڈ موجود ہیں۔ خود ساغر نے اس سلسلے میں شاذ و نادر ہی کسی سے بات کی اور جو کچھ ان کے بارے میں معلوم ہے ان میں سے اکثر گواہوں کے بیانات پر مشتمل ہے۔
صدیقی اپنے والدین کا اکلوتا بیٹا تھا اور اس نے اپنی زندگی کے ابتدائی سال امبالہ اور سہارنپور میں گزارے۔ انہوں نے ابتدائی تعلیم اپنے والد کے دوست حبیب حسن سے حاصل کی ۔ نوجوان محمد اختر (ساغر صدیقی) اپنے استاد حبیب حسن سے بہت متاثر تھے، اور ان کی وجہ سے انہیں اردو شاعری کے ساتھ دلچسپی پیدا ہوئی۔ صدیقی صاحب نے بچپن میں ہی شعر کہنا شروع کیا تھا۔
ساغر کام کی تلاش میں امرتسر، پنجاب چلے گئے اور وہاں پر لکڑی کی کنگھیاں بنانے والے ایک دکاندار کے پاس ملازمت اختیارکی ، اور دکاندار سے لکڑی کی کنگھیاں بنانا سیکھ لیا۔ ساغر کنگھیاں بنانے کے ساتھ ساتھ شاعری بھی کرتے رہے۔ کچھ عرصے تک وہ ناصر حجازی کو اپنے قلمی نام کے طور پر استعمال کرتے رہے لیکن بعد میں وہ ساغر صدیقی کا تخلص رکھ لیا۔ 15 سال کی عمر میں وہ جالندھر، لدھیانہ اور گورداسپور میں مشاعروں میں باقاعدگی سے شرکت کرنے لگے۔
1947 میں، جب وہ 19 سال کے تھے، وہ آزادی کے دوران پاکستان ہجرت کر گئے اور لاہور میں سکونت اختیار کی۔ ان دنوں اپنی دبلی پتلی شکل، پینٹ اور بوسکی قمیض پہن کر، گھنگریالے بالوں کے ساتھ سریلی آواز میں خوبصورت غزلیں پڑھ کر وہ بہت کامیاب ہوئے۔
صدیقی نے فلم انڈسٹری کے لیے گانے لکھنا شروع کئے اور ایک ادبی رسالہ بھی شائع کیا۔ رسالہ شائع کرنا اُس کی ایک اہم کامیابی تھی لیکن غیر مستحکم مالی صورتِ حال کی وجہ سے رسالہ فلاپ ہوگیا۔ مایوس ہو کر ساغر نے رسالہ بند کر دیا۔ اپنی بعد کی زندگی میں، وہ ڈپریشن کا شکار ہو گیا، مالی طور پر تباہ ہو گیا، اور منشیات کا عادی ہو گیا۔
صدیقی نے حکومت کی طرف سے پناہ گزینوں کو دیے گئے مکان میں رہنے کے بجائے سستے ہوٹلوں میں رہنے کا انتخاب کیا۔ وہ اپنی نظمیں رسالوں کو بیچ کر حاصل ہونے والی معمولی رقم سے کرایہ ادا کرتا۔ بعض اوقات اسے چند روپوں کے عوض اپنی شاعری دوسرے شاعروں کو بیچنی پڑتی۔
پاکستان آنے کے ایک عشرے کے اندر، وہ مایوس ہو گئے کیونکہ انہوں نے دیکھا کہ یہاں پر حقیقی ٹیلنٹ کے بجائے کرپشن اور اقربا پروری کا رواج ہے۔ مایوسی کے عالم میں اس نے مارفین کا رخ کیا اور اسے لاہور کے ہسپتالوں کے چوکیداروں سے خرید لیا۔ جیسے جیسے دوست اور اجنبی اس کا استحصال کرتے رہے، صدیقی مزید مایوسی میں ڈوب گیا اور جلد ہی ہوٹلوں سے نکل کر سڑکوں پر رہنا پڑا۔ وہ اکثر لاہور کی سرکلر روڈ اور انارکلی بازار، اخبار مارکیٹ، ایبک روڈ، شاہ عالمی اور داتا دربار کے اطراف میں نظر آتے تھے۔ وہ اکثر فٹ پاتھوں پر موم بتی کی روشنی میں مشاعرے منعقد کرتے ۔ سردیوں کی راتوں میں گرم رہنے کے لیے چاروں طرف پھیلے ہوئے کچرے کے کاغذ کو ہلکی آگ میں استعمال کرتا تھا۔ انہوں نے نظمیں لکھنا جاری رکھا، حالانکہ ان میں سے اکثر گم شدہ اور غیر مطبوعہ ہیں۔
جولائی 1974 میں، صدیقی 46 سال کی عمر میں لاہور کی ایک گلی میں مردہ پائے گئے۔ انہیں میانی صاحب قبرستان میں سپرد خاک کر دیا گیا۔ مبینہ طور پر اسی جگہ پر اس کا کتا بھی ایک سال بعد مر گیا۔ لاہور کے میانی صاحب قبرستان میں ان کے قبر پر بعد میں ایک یادگاری مقبرہ بنایا گیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں