دیوان مرزا غالب از مرزا اسد اللہ خان غالب 108

دیوان مرزا غالب از مرزا اسد اللہ خان غالب

اردو زبان میں دیوان مرزا غالب، تصنیف مرزا اسد اللہ خان غالب۔

دیوان غالب افسانوی شاعر مرزا اسد اللہ غالب کی ایک کلاسک اردو شاعری کی کتاب ہے۔ غالب کا شمار اردو زبان کے عظیم شاعروں میں ہوتا ہے۔ ان کا دیوان لاتعداد مرتبہ شائع ہوا، جس سے یہ اردو شاعری کی سب سے زیادہ چھپنے والی کتابوں میں سے ایک ہے۔

غالب کی شاعری اس لحاظ سے منفرد ہے کہ اس میں فارسی اور اردو کے عناصر کو ملایا گیا ہے، جس کی وجہ سے اسے قارئین کی ایک وسیع رینج تک رسائی حاصل ہے۔ وہ محبت اور دل کو توڑنے سے لے کر فلسفیانہ موسیقی اور سیاسی تبصروں تک اپنے وسیع مضامین کے لیے جانا جاتا تھا۔ ان کی شاعری اس کی گہرائی، پیچیدگی اور فکری سختی کی وجہ سے اسے اردو ادب کا ایک حقیقی شاہکار بناتی ہے۔

غالب کا دیوان ان کی شاعری کی لازوال کشش کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ ان کی وفات کو 150 سال گزر جانے کے باوجود، غالب کے اشعار آج بھی قارئین کو مسحور اور متحرک کر رہے ہیں۔ اردو شاعری کا شائقین ہو یا علمی ادب کا عاشق، دیوان غالب ایک لازمی کتاب ہے۔

اس دیوان میں اردو شاعری کا مجموعہ غالب کی تحریر کی خوبصورتی اور خوبصورتی کو ظاہر کرتا ہے۔ ان کی زبان اور منظر نگاری کا استعمال شاندار سے کم نہیں ہے، اور ان کی نظمیں آج بھی جذبات کو ابھارتی ہیں اور سوچ کو متاثر کرتی ہیں۔ دیوان شاعری کا خزانہ ہے، ہر ایک غالب کی فنی اور فکری مہارت کی عکاسی کرتا ہے۔

مختصر یہ کہ دیوان غالب اردو شاعری کی ایک کلاسک کتاب ہے جو تمثیلی ادب میں اپنے مقام کی مستحق ہے۔ اس کی خوبصورتی اور بے وقتی اردو کے عظیم شاعروں میں سے ایک کی شان کا ثبوت ہے۔ یہ ایک ایسی کتاب ہے جس کا خزانہ ہونا چاہیے اور نسل در نسل منتقل ہونا چاہیے۔

مرزا اسد اللہ خان غالب کے بارے میں

مرزا اسد اللہ خان غالب اردو زبان کے ایک شاعر اور ادبی شخصیت تھے اور ان کا شمار اردو ادب کے عظیم شاعروں میں ہوتا ہے۔ وہ 1797 میں آگرہ میں پیدا ہوئے اور ممتاز سلجوق ترکوں کے خاندان سے تعلق رکھتے تھے۔ اپنے خاندانی پس منظر کے باوجود، غالب نے اپنی ابتدائی جوانی میں صرف ایک مختصر وقت کی خوشی کے ساتھ، بلا روک ٹوک مصائب اور غم کی زندگی کا سامنا کیا۔ اس کی شادی تیرہ سال کی عمر میں ہوئی اور وہ 1812 میں مستقل طور پر دہلی چلے گئے۔ غالب کے پاس آمدنی کا کوئی باقاعدہ ذریعہ نہیں تھا اور وہ مدد کے لیے سرپرستوں پر انحصار کرتے تھے، جس کے نتیجے میں اکثر مسائل پیدا ہوتے تھے۔ اس کی گھریلو زندگی خوشگوار نہیں تھی، اور اس کا اپنا گھر کبھی نہیں تھا۔ وہ اور اس کی اہلیہ مزاج کے لحاظ سے ایک دوسرے کے لیے موزوں نہیں تھے، اور ان کے ساتوں بچے بچپن میں ہی مر گئے۔

غالب ہمدرد، فیاض اور رحم دل انسان تھے لیکن مخالفین کے ساتھ بھی بے رحم تھے۔ وہ نزول اور مزاج کے اعتبار سے ایک اشرافیہ تھا اور اسے اپنے نسب پر فخر تھا۔ وہ زندگی کی اچھی چیزوں سے محبت کرتا تھا لیکن معمولی زندگی گزارتا تھا اور اس بات پر ناراض تھا کہ عدالت میں اس کی مناسب تعریف نہیں کی گئی۔ غالب نے اردو کے بجائے فارسی میں زیادہ لکھا، لیکن وہ اپنے اردو کاموں کے لیے زیادہ پسند اور یاد کیے جاتے ہیں۔ اس نے دس سال کی عمر میں شاعری شروع کی اور وہ ایک پیچیدہ شاعر تھا جس کی دنیا وسیع اور متضاد تھی۔ ان کی غزلیں منفرد ہیں اور شاندار راگ اور دنیا کی خوبصورتی کے گہرے احساس کے ساتھ شدید جذبات کا اظہار کرتی ہیں۔ غالب نے وجود کی وحدت کی پرجوش تعریف کی اور دنیا کے بارے میں اپنے بالکل نئے انداز کے لیے ایک قابل قدر شاعر تھے۔

یہاں‌سے ڈاؤنلوڈ کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں