آگے سمندر ہے ناول از انتظار حسین 143

آگے سمندر ہے ناول از انتظار حسین

انتظار حسین کا لکھا ہوا اسلامی تاریخی ناول “آگے سمندر ہے ناول”

“آگے سمندر ہے” ایک تاریخی ناول ہے جو قاری کو قرطبہ اور غرناطہ کی تاریخ اور ماضی کی محبت کے سفر پر لے جاتا ہے۔ کہانی ماضی کے موضوعات، روایت میں پناہ لینے، اور پرانی اقدار کو کھونے کے دکھ کو تلاش کرتی ہے۔ مصنف اپنی داستان کے ذریعے یہ بتاتا ہے کہ مسلم قوم کی شاندار تاریخ مٹتی جا رہی ہے اور فراموش کی جا رہی ہے۔

ناول اس خیال کے گرد گھومتا ہے کہ قوم کو آگے بڑھنے کے لیے اپنے ماضی سے سبق سیکھنے کی ضرورت ہے۔ مصنف نے ماضی میں مسلم ملک کی بہادری پر روشنی ڈالی ہے، جہاں وہ کشتیاں بنا کر دشمن کے کیمپ تک جایا کرتے تھے، ساحل پر پہنچ کر جہازوں کو جلا دیتے تھے۔ یہ امت مسلمہ کے عزم اور بہادری کی علامت ہے۔ تاہم آج وہ تاریخ گم ہو چکی ہے اور مصنف قوم کو موجودہ حالات پر نظر رکھنے اور ماضی سے سبق لینے کی ترغیب دینے کی کوشش کر رہا ہے۔

ناول ماضی اور پرانی قدروں کے زوال کا ایک پرانی عکس ہے۔ یہ ان نئی اقدار کی جذباتیت کو تلاش کرتا ہے جنہوں نے پرانی اقدار کی جگہ لے لی ہے۔ مصنف نے ماضی کو فراموش کرنے کے نقصانات اور نئی اقدار کی اتھلی اور سطحی نوعیت پر افسوس کا اظہار کیا ہے۔ مصنف قوم کو اپنی تاریخ پر نظر ڈالنے اور آنے والی نسلوں کے لیے اسے محفوظ کرنے کی ترغیب دیتا ہے۔ مصنف کا پیغام واضح ہے: قوم کو آگے بڑھنے کے لیے ماضی سے سبق لینے کی ضرورت ہے۔

“آگے سمندر ہے” اب پاکستان کی ورچوئل لائبریری میں ہمارے مہمانوں کے مطالعہ کے لیے ایک اعلیٰ معیار کی پی ڈی ایف دستاویز کے طور پر دستیاب ہے۔ آن لائن پڑھنے یا مکمل ناول کو پی ڈی ایف فارمیٹ میں ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے درج ذیل لنکس کو دیکھیں اور اپنے کمپیوٹر اور اسمارٹ فون پر آف لائن پڑھنے سے لطف اندوز ہوں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں